گھر

قریہ قریہ وہ محبت ڈھونڈیں ہیں

جنہیں گھر کی تلاش ہے

مکان کی آس نہیں۔

پھر وہ ادھر ادھر بھٹکتے ہیں

راہوں میں رلتے ہیں

!بس اک گھر مرے پاس نہیں

محفلوں میں بھی، جو الف ہوتے ہیں

مسکرا کےکہتے ہیں

ہم اداس تو نہیں۔

پھر نگاہیں شام میں، افق پر اٹھتی ہیں

یہ رات کیوں آتی ہے؟

صبح تمام کیوں نہیں۔

پھر کھلی آنکھوں کا، سفر ہوتا ہے

گرد اڑتی ہےمگر

منزل آس پاس تو نہیں۔

پھر وہ چاہ سے کہتے ہیں

تو گزر جاتی ہے

!میری جان تو نہیں

پھر دھند زدہ آنکھیں، ساتھ میں رم جھم

بڑی ہی بات ہے یہ

!کوٸی راز تو نہیں

© 2022 ASNworks. All Rights Reserved.

Qariya qariya woh muhabbat dhundain hain

jinhain gher ki talaash hai

makaan ki aas nahi.

Phir woh idher udher bhataktay hain

raahon mein rultay hain

bus ik gher mere pass nahi!

Mehfilon mein bhi, jo alif hotay hain

muskura ke kehtay hain

hum udaas toh nahi.

Phir nigahain sham mein, ufaq per uthti hain

yeh raat kyun aati hai?

subh tamam kyun nahi?

Phir khuli ankhon ka, safar hota hai

gard urti hai mager

manzil aas paas toh nahi.

Phir woh chaah se kehte hain

tu guzer jati hai

meri jaan toh nahi!

Phir dhund zada ankhain aur sath mein rim jhim

bari he baat hai yeh

koi raaz toh nahi!

© 2022 ASNworks. All Rights Reserved.

Published by SolaceJoint

ASNworks.org

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: